Tina Sani Sings Shikwa and Jawab e Shikwa: Download MP3 Worlds Largest Collection of Qawwali, Arfana & Sufiana Kalam, Hamd & Naat

Tina Sani Sings Shikwa and Jawab e Shikwa

 

Dr. Allama Muhammad Iqbal Kalaam/Poetry  اردو urdu

 

Shikwa and Jawab e Shikwa remains Allama Iqbal’s evergreen poems, which has been sung by many legends. Below is rendition by queen of semi-classical music, Tina Sani.

 

 

 Download 6.6MB (04.16)

Lyrics

Kyoon Ziyan Kaar Banoo, Sood Faramosh Rahoon?
Fikr-e-Farda Na Karun, Mehway Ghum-e-Dosh Rahoon

Naalay Bulbul Ke Sunoon, Aur Hama Tun Goshh Rahoon
Hum Nawa Mein Bhi Koee Gul Hoon Ke Khamosh Rahoon?

Jurrat Aamoz Meri Taab-E-Sakhun Hai Mujhko
Shikwa Allah Se, Khakam Badahan, Hai Mujhko

Aye Khuda Shikwa-E-Arbaab-E-Wafaa Bhi Sunn Le
Khugar-E-Hamd Se Thora Sa Gilla Bhi Sunn Le

Thi Toh Maujood Azal Se Hi Teri Zaat-E-Qadim
Phool Tha Zeb-E-Chaman Par Na Pareshan Thi Shamim

Shart Insaaf Hai Aye Sahib-E-Altaaf-E-Ameem
Boo-E-Gul Phailti Kis Tarah Jo Hotee Na Nasim?

Hum Se Pehle Tha Ajab Teray Jahaan Ka Manzir
Kahin Masjood The Patthar Kahin Maabood Shajar

Khugar-E-Paikar-E-Mahsoos Thee Insaan Ki Nazar
Maanta Phir Koi Undekhey Khuda Ko Kyon kar?

Tujhko Maaloom Hai Laita Tha Koi Naam Tera?
Qoowwat-E-Baazoo-E-Muslim Ne Kiya Kaam Tera

Bas Rahee They Yahin Salijauq Bhi Toorani Bhi
Ahl-E-Chin Chi Mein Iran Mein Sasaani Bhi

Isi Mamoore Mein Aabad Thi Yoonaani Bhi
Isi Duniya Mein Yahodi Bhi Thay, Nusraani Bhi

Par Tere Naam Pe Talwar Uthai Kiss Ne?
Baat Joh Bigri Hooyi Thi Woh Banaayi Kiss Ney?

Thay Hammi Ek Terey Maarka Aaraaon Mein
Khushkion Mein Kabhi Lartey, Kabhi Dariyaon Mein

Di Azaanain Kabhi Europe Ke Kaleesaaon Mein
Kabhi Africa Ke Taptey Hooay Sahraaon Mein

Thee Na Kuchh Tegg Zani Apni Hakoomat Ke Liye
Sar Ba-Kaf Phirtey Thay Kya Dahar Mein Daulat Ke Liye?

Qaum Apni Jo Zar-O-Maal-E-Jahan Par Marti
Boot Faroshi Ke Iwaz Boot Shiknee Kyon Karti?

Naqsh Tauheed Ka Harr Dil Pe Bithaya Hum Ne
Zair-E-Khanjar Bhi Yeh Paigham Sunaaya Hum Ne

Tu Hi Kahh De Ke Ukhara Dar-E-Khyber Kis Ne
Shaher Qaiser Ka Jo Thaa Uss Ko Kiya Sar Kiss Ne?

Tore Makhlooq Khudawandon Ke Paikar Kiss Ne?
Kaat Kar Rakh Diyey Kaffaar Ke Lashkar Kis Ne?

Aa Gaya Ayn Laraai Mein Agar Waqt-E-Namaz
Qibla Roo Ho Ke Zameen Boas Huee Qaum-E-Hejaaz

Ek Hi Saff Mein Khare Ho Gaye Mahmood-O-Ayaz
No Koi Banda Raha Aur No Koi Banda Nawaaz

Bandaa-O-Sahib-O-Muhtaaj-O-Ghani Aik Hooye
Teri Sarkar Mein Pahunche Toh Sabhi Ek Hooye

Mehfil-E-Kaun-O-Makaan Mein Shar-O-Shaam Phirre
Mai-E-Tauheed Ko Lekar Sift-E-Jaam Phirey

Dasht Toh Dasht Hain Darya Bhi Na Chhorre Hum Ne
Bahr-E-Zulmaat Mein Daura Diye Ghorrey Hum Ne

Safaah-E-Dahar Se Baatil Ko Mitayaa Hum Ne
Nau-E-Insaan Ko Ghulami Se Chhuraya Hum Ne

Tere Kaabe Ko Jabeenon Se Basaya Hum Ne
Tere Quran Ko Seeno Se Lagaya Hum Ne

Phir Bhi Hum Se Yeh Gillaa Hai Ke Wafadaar Nahin
Hum Wafadar Nahin Tu Bhi Toh Dildaar Nahin

Rahmaten Hain Teri Aghiyar Ke Kashaanon Par
Barq Girti Hai Toh Bechare Musalmaanon Par

Yeh Shikayat Nahin Hain Un Ke Khazane Maamoor
Nahin Mehfil Mein Jinhen Baat Bhi Karne Ka Shaoor

Qahar Toh Yeh Hai Ke Kaafir Ko Milen Hoor-O-Qasoor
Aur Bechaare Musalmaan Ko Faqt Waada-E-Hoor

Taan-E-Aghiyaar Hai Ruswai Hai Nadari Hai
Kya Tere Naam Pe Marne Ka Iwaz Khwari Hai?

Hum Toh Jeete Hain Ke Duniya Mein Tera Naam Rahey
Kahin Mumkin Hai Saqi Na Rahe Jaam Rahe?

Teri Mehfil Bhi Gayi Chahney Wale Bhi Gaye
Shab Ki Aahen Bhi Gayi Subah Ke Naaley Bhi Gaye

Dil Tujhe De Bhi Gaye Apna Sila Le Bhi Gaye
Aa Ke Baithe Bhi Na The Ke Nikaale Bhi Gaye

Aaye Ushaaq Gaye Waada-E- Farda Lekar
Ab Unhen Dhoond Chirag-E-Rukh-E-Zeba Lekar

Dard-E-Laila Bhi Wohi Qais Ka Pahlu Bhi Wohi
Najd Ke Dasht-O-Jabal Mein Ram-E-Aahoo Bhi Wohi

Ishq Ka Dil Bhi Wohi Husn Ka Jaadoo Bhi Wohi
Ummat-E-Ahmed-E-Mursil Bhi Wohi Tu Bhi Wohi

Phir Yeh Aazurdagi-E-Ghair- Sabab Kya Maani
Apne Shaidaaon Pe Yeh Chashm-E-Ghazab Kya Maani?

Ishq Ki Khair Woh Pehlee Si Ada Bhi Na Sahi
Jaada Paimaai Taslim-O-Raza Bhi Na Sahee

Kabhi Hum Se Kabhi Ghairon Se Shanasai Hai
Baat Kahne Ki Nahin Tu Bhi Toh Harjaai Hai

Ahd-E-Gul Khatam Hua Toot Gaya Saaz-E-Chaman
Urr Gaye Dalion Se Zamzama Pardaaz-E-Chaman

Ek Bulbul Hai Ke Hai Mahw-E-Tarannum Ab Tak
Us Ke Seeney Mein Hai Naghmon Ka Talaatam Ab Tak

Qumrian Shaakh-E-Sanober Se Gurezaan Bhi Hoee
Pattian Phool Ki Jhad Jhad Ke Pareshan Bhi Huee

Woh Purani Ravishen Bagh Ki Veeran Bhi Hui
Daalian Parahan-E-Barg Se Uriaan Bhi Hui

Qaid-E-Mausim Se Tabiyat Rahi Aazad Uski
Kaash Gulshan Mein Samjhtaa Koi Faryaad Uski

Chaak Iss Bulbul-E-Tanha Ki Nawa Se Dil Honn
Jaagne Wale Isi Baang-E-Dara Se Dil Hon

Yaani Phir Zinda Naye Ahd-E- Wafa Se Dil Hon
Phir Isi Bada-E-Deereena Ke Pyaase Dil Hon

Ajmee Khum Hai Toh Kya Maiy Toh Hejaazi Hai Meri
Naghma Hindi Hai Toh Kya Laiy Toh Hejaazi Hai Meri

 

Urdu Text

کیوں زیاں کار بنوں، سُود فراموش رہوں
فکرِ فردا نہ کروں محوِ غمِ دوش رہوں
نالے بُلبل کے سُنوں اور ہمہ تن گوش رہوں
ہم نَوا مَیں بھی کوئی گُل ہوں کہ خاموش رہوں
جُرأت آموز مری تابِ سخن ہے مجھ کو
شکوہ اللہ سے، خاکم بدہن، ہے مجھ کو
ہے بجا شیوۂ تسلیم میں مشہور ہیں ہم
قصّۂ درد سُناتے ہیں کہ مجبور ہیں ہم
سازِ خاموش ہیں، فریاد سے معمور ہیں ہم
نالہ آتا ہے اگر لب پہ تو معذور ہیں ہم
اے خدا! شکوۂ اربابِ وفا بھی سُن لے
خُوگرِ حمد سے تھوڑا سا گِلا بھی سُن لے
تھی تو موجود ازل سے ہی تری ذاتِ قدیم
پھُول تھا زیبِ چمن پر نہ پریشاں تھی شمیم
شرطِ انصاف ہے اے صاحبِ الطافِ عمیم
بُوئے گُل پھیلتی کس طرح جو ہوتی نہ نسیم
ہم کو جمعیّتِ خاطر یہ پریشانی تھی
ورنہ اُمّت ترے محبوبؐ کی دیوانی تھی؟
ہم سے پہلے تھا عجب تیرے جہاں کا منظر
کہیں مسجود تھے پتھّر، کہیں معبود شجر
خُوگرِ پیکرِ محسوس تھی انساں کی نظر
مانتا پھر کوئی اَن دیکھے خدا کو کیونکر
تجھ کو معلوم ہے لیتا تھا کوئی نام ترا؟
قوّتِ بازوئے مسلم نے کیا کام ترا
بس رہے تھے یہیں سلجوق بھی، تُورانی بھی
اہلِ چِیں چِین میں، ایران میں ساسانی بھی
اسی معمورے میں آباد تھے یونانی بھی
اسی دنیا میں یہودی بھی تھے، نصرانی بھی
پر ترے نام پہ تلوار اُٹھائی کس نے
بات جو بگڑی ہوئی تھی، وہ بنائی کس نے
تھے ہمیں ایک ترے معرکہ آراؤں میں
خشکیوں میں کبھی لڑتے، کبھی دریاؤں میں
دِیں اذانیں کبھی یورپ کے کلیساؤں میں
کبھی افریقہ کے تپتے ہوئے صحراؤں میں
شان آنکھوں میں نہ جچتی تھی جہاںداروں کی
کلِمہ پڑھتے تھے ہم چھاؤں میں تلواروں کی
ہم جو جیتے تھے تو جنگوں کی مصیبت کے لیے
اور مرتے تھے ترے نام کی عظمت کے لیے
تھی نہ کچھ تیغ‌زنی اپنی حکومت کے لیے
سربکف پھرتے تھے کیا دہر میں دولت کے لیے؟
قوم اپنی جو زر و مالِ جہاں پر مرتی
بُت فروشی کے عَوض بُت شکَنی کیوں کرتی!
ٹل نہ سکتے تھے اگر جنگ میں اَڑ جاتے تھے
پاؤں شیروں کے بھی میداں سے اُکھڑ جاتے تھے
تجھ سے سرکش ہُوا کوئی تو بگڑ جاتے تھے
تیغ کیا چیز ہے، ہم توپ سے لڑ جاتے تھے
نقش توحید کا ہر دل پہ بٹھایا ہم نے
زیرِ خنجر بھی یہ پیغام سُنایا ہم نے
تُو ہی کہہ دے کہ اُکھاڑا درِ خیبر کس نے
شہر قیصر کا جو تھا، اُس کو کِیا سر کس نے
توڑے مخلوق خداوندوں کے پیکر کس نے
کاٹ کر رکھ دیے کُفّار کے لشکر کس نے
کس نے ٹھنڈا کِیا آتشکدۂ ایراں کو؟
کس نے پھر زندہ کِیا تذکرۂ یزداں کو؟
کون سی قوم فقط تیری طلب گار ہوئی
اور تیرے لیے زحمت کشِ پیکار ہوئی
کس کی شمشیر جہاں‌گیر ، جہاں‌دار ہوئی
کس کی تکبیر سے دنیا تری بیدار ہوئی
کس کی ہیبت سے صنم سہمے ہوئے رہتے تھے
مُنہ کے بَل گر کے ’ھُوَاللہُاَحَد‘ کہتے تھے
آگیا عین لڑائی میں اگر وقتِ نماز
قبلہ رُو ہو کے زمیں بوس ہوئی قومِ حجاز
ایک ہی صف میں کھڑے ہو گئے محمود و ایاز
نہ کوئی بندہ رہا اور نہ کوئی بندہ نواز
بندہ و صاحب و محتاج و غنی ایک ہوئے
تیری سرکار میں پہنچے تو سبھی ایک ہوئے
محفلِ کون و مکاں میں سحَر و شام پھرے
مئے توحید کو لے کر صفَتِ جام پھرے
کوہ میں، دشت میں لے کر ترا پیغام پھرے
اور معلوم ہے تجھ کو، کبھی ناکام پھرے!
دشت تو دشت ہیں، دریا بھی نہ چھوڑے ہم نے
بحرِ ظلمات میں دوڑا دیے گھوڑے ہم نے
صفحۂ دہر سے باطل کو مِٹایا ہم نے
نوعِ انساں کو غلامی سے چھُڑایا ہم نے
تیرے کعبے کو جبینوں سے بسایا ہم نے
تیرے قرآن کو سینوں سے لگایا ہم نے
پھر بھی ہم سے یہ گلہ ہے کہ وفادار نہیں
ہم وفادار نہیں، تُو بھی تو دِلدار نہیں!
اُمتّیں اور بھی ہیں، ان میں گنہ‌گار بھی ہیں
عجز والے بھی ہیں، مستِ مئے پندار بھی ہیں
ان میں کاہل بھی ہیں، غافل بھی ہیں، ہشیار بھی ہیں
سینکڑوں ہیں کہ ترے نام سے بیزار بھی ہیں
رحمتیں ہیں تری اغیار کے کاشانوں پر
برق گرتی ہے تو بیچارے مسلمانوں پر
بُت صنم خانوں میں کہتے ہیں، مسلمان گئے
ہے خوشی ان کو کہ کعبے کے نگہبان گئے
منزلِ دہر سے اونٹوں کے حُدی خوان گئے
اپنی بغلوں میں دبائے ہوئے قرآن گئے
خندہ زن کُفر ہے، احساس تجھے ہے کہ نہیں
اپنی توحید کا کچھ پاس تجھے ہے کہ نہیں
یہ شکایت نہیں، ہیں اُن کے خزانے معمور
نہیں محفل میں جنھیں بات بھی کرنے کا شعور
قہر تو یہ ہے کہ کافر کو مِلیں حُور و قصور
اور بیچارے مسلماں کو فقط وعدۂ حور
اب وہ اَلطاف نہیں، ہم پہ عنایات نہیں
بات یہ کیا ہے کہ پہلی سی مدارات نہیں
کیوں مسلمانوں میں ہے دولتِ دنیا نایاب
تیری قُدرت تو ہے وہ جس کی نہ حد ہے نہ حساب
تُو جو چاہے تو اُٹھے سینۂ صحرا سے حباب
رہروِ دشت ہو سیلی زدۂ موجِ سراب
طعنِ اغیار ہے، رُسوائی ہے، ناداری ہے
کیا ترے نام پہ مرنے کا عوض خواری ہے؟
بنی اغیار کی اب چاہنے والی دنیا
رہ گئی اپنے لیے ایک خیالی دنیا
ہم تو رخصت ہوئے، اَوروں نے سنبھالی دنیا
پھر نہ کہنا ہوئی توحید سے خالی دنیا
ہم تو جیتے ہیں کہ دنیا میں ترا نام رہے
کہیں ممکن ہے کہ ساقی نہ رہے، جام رہے!
تیری محفل بھی گئی، چاہنے والے بھی گئے
شب کی آہیں بھی گئیں، صبح کے نالے بھی گئے
دل تجھے دے بھی گئے، اپنا صِلا لے بھی گئے
آ کے بیٹھے بھی نہ تھے اور نکالے بھی گئے
آئے عُشّاق، گئے وعدۂ فردا لے کر
اب اُنھیں ڈھُونڈ چراغِ رُخِ زیبا لے کر
دردِ لیلیٰ بھی وہی، قیس کا پہلو بھی وہی
نجد کے دشت و جبل میں رمِ آہو بھی وہی
عشق کا دل بھی وہی، حُسن کا جادو بھی وہی
اُمّتِ احمدِ مرسلؐ بھی وہی، تُو بھی وہی
پھر یہ آزردگیِ غیرِ سبب کیا معنی
اپنے شیداؤں پہ یہ چشمِ غضب کیا معنی
تجھ کو چھوڑا کہ رَسُولِ عرَبیؐ کو چھوڑا؟
بُت گری پیشہ کِیا، بُت شکَنی کو چھوڑا؟
عشق کو، عشق کی آشفتہ سری کو چھوڑا؟
رسمِ سلمانؓ و اویسِ قرَنیؓ کو چھوڑا؟
آگ تکبیر کی سینوں میں دبی رکھتے ہیں
زندگی مثلِ بلالِ حَبشیؓ رکھتے ہیں
عشق کی خیر وہ پہلی سی ادا بھی نہ سہی
جادہ پیمائیِ تسلیم و رضا بھی نہ سہی
مُضطرب دل صفَتِ قبلہ نما بھی نہ سہی
اور پابندیِ آئینِ وفا بھی نہ سہی
کبھی ہم سے، کبھی غیروں سے شناسائی ہے
بات کہنے کی نہیں، تُو بھی تو ہرجائی ہے!
سرِ فاراں پہ کِیا دین کو کامل تو نے
اک اشارے میں ہزاروں کے لیے دل تو نے
آتش اندوز کِیا عشق کا حاصل تو نے
پھُونک دی گرمیِ رُخسار سے محفل تو نے
آج کیوں سینے ہمارے شرر آباد نہیں
ہم وہی سوختہ ساماں ہیں، تجھے یاد نہیں؟
وادیِ نجد میں وہ شورِ سلاسل نہ رہا
قیس دیوانۂ نظّارۂ محمل نہ رہا
حوصلے وہ نہ رہے، ہم نہ رہے، دل نہ رہا
گھر یہ اُجڑا ہے کہ تُو رونقِ محفل نہ رہا
اے خوش آں روز کہ آئی و بصد ناز آئی
بے حجابانہ سُوئے محفلِ ما باز آئی
بادہ کش غیر ہیں گلشن میں لبِ جُو بیٹھے
سُنتے ہیں جام بکف نغمۂ کُوکُو بیٹھے
دور ہنگامۂ گُلزار سے یک سُو بیٹھے
تیرے دیوانے بھی ہیں منتظرِ ’ھُو‘ بیٹھے
اپنے پروانوں کو پھر ذوقِ خُود افروزی دے
برقِ دیرینہ کو فرمانِ جگر سوزی دے
قومِ آوارہ عناں تاب ہے پھر سُوئے حجاز
لے اُڑا بُلبلِ بے پر کو مذاقِ پرواز
مضطرب باغ کے ہر غنچے میں ہے بُوئے نیاز
تُو ذرا چھیڑ تو دے، تشنۂ مضراب ہے ساز
نغمے بے تاب ہیں تاروں سے نکلنے کے لیے
طُور مضطر ہے اُسی آگ میں جلنے کے لیے
مُشکلیں اُمّتِ مرحُوم کی آساں کر دے
مُورِ بے مایہ کو ہمدوشِ سلیماں کر دے
جنسِ نایابِ محبّت کو پھر ارزاں کر دے
ہند کے دَیر نشینوں کو مسلماں کر دے
جُوئے خوں می چکد از حسرتِ دیرینۂ ما
می تپد نالہ بہ نشتر کدۂ سینۂ ما
بُوئے گُل لے گئی بیرونِ چمن رازِ چمن
کیا قیامت ہے کہ خود پھُول ہیں غمّازِ چمن!
عہدِ گُل ختم ہوا، ٹُوٹ گیا سازِ چمن
اُڑ گئے ڈالیوں سے زمزمہ پردازِ چمن
ایک بُلبل ہے کہ ہے محوِ ترنّم اب تک
اس کے سینے میں ہے نغموں کا تلاطم اب تک
قُمریاں شاخِ صنوبر سے گُریزاں بھی ہوئیں
پیّتاں پھُول کی جھڑ جھڑ کے پریشاں بھی ہوئیں
وہ پُرانی روِشیں باغ کی ویراں بھی ہوئیں
ڈالیاں پیرہنِ برگ سے عُریاں بھی ہوئیں
قیدِ موسم سے طبیعت رہی آزاد اس کی
کاش گُلشن میں سمجھتا کوئی فریاد اس کی!
لُطف مرنے میں ہے باقی، نہ مزا جینے میں
کچھ مزا ہے تو یہی خُونِ جگر پینے میں
کتنے بے تاب ہیں جوہر مرے آئینے میں
کس قدر جلوے تڑپتے ہیں مرے سینے میں
اس گُلستاں میں مگر دیکھنے والے ہی نہیں
داغ جو سینے میں رکھتے ہوں، وہ لالے ہی نہیں
چاک اس بُلبلِ تنہا کی نوا سے دل ہوں
جاگنے والے اسی بانگِ درا سے دل ہوں
یعنی پھر زندہ نئے عہدِ وفا سے دل ہوں
پھر اسی بادۂ دیرینہ کے پیاسے دل ہوں
عجَمی خُم ہے تو کیا، مے تو حجازی ہے مری
نغمہ ہندی ہے تو کیا، لَے تو حجازی ہے مری!

 

All poetry of Dr. Muhammad Iqbal is in public domain as he never copyrighted his complication Kuliyat-e-Iqbal. Above can be shared without permission of TheSufi.com.

 

 

Facebook Comments