Faiz Ahmed Faiz: Master of Romantic Socialism and U-Turns!

The key theme that made Faiz such admirable poet was his bringing ‘Socialist Romanticism’ in Urdu Poetry. Faiz wrote usual Urdu Nazms and Ghazals, but also blended this with a voice for common man problems and love for country.

 

He did both Ishq (Love) and Kaam (Socialist Movement), which is best narrated in his short poem below:

Kuch Ishq Kiya, Kuch Kaam Kiya [Ishq Aur Kaam] – Faiz Ahmed Faiz

کچھ عشق کیا ، کچھ کام کیا

وہ لوگ بہت خوش قسمت تھے

جو عشق کو کام سمجھتے تھے

یا کام سے عاشقی کرتے تھے

ہم جیتے جی مصروف رہے

کچھ عشق کیا کچھ کام کیا

کام عشق کے آڑے آتا رہا

اور عشق سے کام الجھتا رہا

اور آخر تنگ آکر ہم نے

دونوں کو ادھورا چھوڑ دیا

(فیض احمد فیض)

Translation
How fortunate were those people!
For whom love was their work
Or work was their love
We spend all our life occupied
Did some love, did some work
But our work hindered our love
And love tangled with our work
And one day, with annoyance
We left both of them unfinished.

 

[Verse Translation Courtesy of Kuch Ishq Kiya, Kuch Kaam Kiya [Ishq Aur Kaam] – Faiz Ahmed Faiz | Ravi Magazine with permission and thanks]

 

Faiz was also the master of u-turns, who switched from patriotism to ordinary love and then again to patriotism, in the same poem. Do Ishq [Two Loves] is a testimonial of such U-Turn, which is his earlier poems but show his master over verse from a very young age:

 

 

دو عشق

تازہ ہیں ابھی یاد میں اے ساقیِ گلفام
وہ عکسِ رخِ یار سے لہکے ہوئے ایام
وہ پھول سی کھلتی ہوئی دیدار کی ساعت
وہ دل سا دھڑکتا ہوا امید کا ہنگام

امید کہ لو جاگا غمِ دل کا نصیبہ
لو شوق کی ترسی ہوئی شب ہو گئی آخر
لو ڈوب گئے درد کے بے خواب ستارے
اب چمکے گا بے صبر نگاہوں کا مقدر

اس بام سے نکلے گا ترے حسن کا خورشید
اُس کنج سے پھوٹے گی کرن رنگِ حنا کی
اس در سے بہے گا تری رفتار کا سیماب
اُس راہ پہ پھولے گی شفق تیری قبا کی

پھر دیکھے ہیں وہ ہجر کے تپتے ہوئے دن بھی
جب فکرِ دل و جاں میں فغاں بھول گئی ہے
ہر شب وہ سیہ بوجھ کہ دل بیٹھ گیا ہے
ہر صبح کی لو تیر سی سینے میں لگی ہے

تنہائی میں کیا کیا نہ تجھے یاد کیا ہے
کیا کیا نہ دلِ زار نے ڈھونڈی ہیں پناہیں
آنکھوں سے لگایا ہے کبھی دستِ صبا کو
ڈالی ہیں کبھی گردنِ مہتاب میں باہیں

چاہا ہے اسی رنگ سے لیلائے وطن کو
تڑپا ہے اسی طور سے دل اس کی لگن میں
ڈھونڈی ہے یونہی شوق نے آسائشِ منزل
رخسار کے خم میں کبھی کاکل کی شکن میں

اُس جانِ جہاں کو بھی یونہی قلب و نظر نے
ہنس ہنس کے صدا دی، کبھی رو رو کے پکارا
پورے کیے سب حرفِ تمنا کے تقاضے
ہر درد کو اجیالا، ہر اک غم کو سنوارا

واپس نہیں پھیرا کوئی فرمان جنوں کا
تنہا نہیں لوٹی کبھی آواز جرس کی
خیریتِ جاں، راحتِ تن، صحتِ داماں
سب بھول گئیں مصلحتیں اہلِ ہوس کی

اس راہ میں جو سب پہ گزرتی ہے وہ گزری
تنہا پسِ زنداں، کبھی رسوا سرِ بازار
گرجے ہیں بہت شیخ سرِ گوشہء منبر
کڑکے ہیں بہت اہلِ حکم برسرِ دربار

چھوڑا نہیں غیروں نے کوئی ناوکِ دشنام
چھوٹی نہیں اپنوں سے کوئی طرزِ ملامت
اس عشق، نہ اُس عشق پہ نادم ہے مگر دل
ہر داغ ہے اس دل میں بجز داغِ ندامت

Tina Sani can truly be considered the voice of Faiz Ahmed Faiz with her amazing renditions of below Kalam:

Tina Sani and Faiz Ahmed Ahmed

Tina Sani and Faiz Ahmed Ahmed

 

 

Facebook Comments


You may also like...